نور

 

میں ایک عرصہ تک اس نور والے فلسفے پر مغز کپھائی کرتا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بالآخر جب اللہ تعالیٰ کی جانب سے توفیق حاصل ہوئی تو سمجھ میں آیا کہ نور کیا ہے اور کن کن معانی و استعارات میں استعمال ہوتا ہے۔ ہمارے بابا جی رحمتہ اللہ علیہ دعا کرتے وقت ہمیشہ اختصار و آہستگی اختیار فرماتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ زیر لب کچھ کہتے پڑھتے، وہ  بھی لب مبارک کی جنبش سے پتہ چلتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ خوش قسمتی کہ چند ایک بار مجھے ان کے دعائیہ الفاظ سماعت کرنے کا موقع نصیب ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہی مواقع تھے کہ میں لفظ نور کی معنوی بصیرت سے فیضیاب ہوا۔ آپ بابا جی ہمیشہ لفظ نور کو ہر دعا و التجا کا نمایاں حصہ بناتے تھے۔ مثلاً ’’اے باری تعالیٰ ہمیں نورِ بصیرت عطا فرما، نورِ یقین، نورِ ایمان، نورِ علم، نورِ توحید، نورِ بندگی اور نورِ استقامت، نورِ رزق، نورِ صبر، نورِ صحت، نورِ اولاد عطا فرما۔۔۔۔۔۔۔۔‘‘

بات کھلی کہ ہر مادے، ارادے، استفادے کا اصل ماخذ تو نور الٰہی ہے، اگر محض یہ کہا جائے کہ ہمیں بے حساب رزق عطا کر ۔۔۔۔۔۔۔۔ رزق تو آگیا اگر برکت نہ ہوئی تو کیا فائدہ؟ اولاد مل گئی لیکن اس میں صالحیت نہ آئی تو کس کام کی؟

(’’کاجل کوٹھا‘‘ از محمد یحییٰ خان سے اقتباس)