حاصل اور لاحاصل

 

کیا وجود انسانی اتنا ارزاں ہے کہ اس کو یونہی ضائع ہونے دیا جائے ۔۔۔۔۔ جب انسان کا وجود تخلیق ہوتا ہے تو کن کن پردوں میں اور کہاں کہاں خدا اس کی حفاظت کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ ہر جگہ اس کی ضروریات کا خیال رکھتا ہے۔ کہاں سے خوراک اور کہاں سے سانسیں اس کو بہم پہنچاتا ہے ۔۔۔۔۔ اور جب انسان باشعور ہوتا ہے تو خود ہی اپنے آپ کو مارنے کے درپے ہوجاتا ہے۔ اس وقت خدا کیا کرے۔ وہ تو یہی سوچتا ہے کہ جب تم میرے پر انحصار کرتے تھے تو میں نے کس طرح تمہیں حفاظت سے رکھا۔ اب اپنی سوچوں اور خواہشات پر انحصار کرتے ہو تو کہاں بھٹکے چلے جاتے ہو ۔۔۔۔۔ تم کیا بن گئے ہو؟

میں تو صرف یہی کہوں گی ۔۔۔۔۔ کہیں نہ دیکھو۔۔۔۔۔ کسی کے بارے میں نہ سوچو۔۔۔۔۔۔ صرف اپنے اندر جھانکنے کی کوشش کرو۔۔۔۔۔ اگر نظر صحیح ہوگی اور زاویہ درست ہوگا تو اک جہاں نظر آئے گا، پوری طرح روشن، اس خاکی جہاں سے ماورا۔ ویسا ہی جیسی تمہاری سوچ ہوگی ۔۔۔۔۔ ایسا جیسا تم سمجھوگی، سب سے مختلف۔۔۔۔۔۔ پھر پرت پہ پرت کھلتا جائے گا ۔۔۔۔۔۔ اسرار ظاہر ہوتے جائیں گے ۔۔۔۔۔۔ یہاں تک کہ وجود ختم ہوجائے گا۔۔۔۔۔

ہر اک کی زندگی میں ایک بار دستک ضرور ہوتی ہے ۔۔۔۔۔ کبھی یونہی چلتے چلتے ۔۔۔۔۔۔ کبھی ٹھوکر لگنے پر ۔۔۔۔۔ کبھی کوئی بازی ہار کر ۔۔۔۔۔ کبھی منہ کے بل گر کر اور کبھی سارا کچھ ہار کر ۔۔۔۔۔ صرف اس دستک کو سمجھنے کی بات ہے ۔۔۔۔۔ اس کے بعد ایسا سفر شروع ہوجاتا ہے جو کبھی ختم نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔ حاصل اور لاحاصل کے درمیان جنگ ختم ہوجاتی ہے ۔۔۔۔۔ بس اک چپ سی لگ جاتی ہے ۔۔۔۔۔ ایسی چپ جس میں نہ کوئی افسوس ہوتا ہے، نہ پچھتاوا، نہ دکھ، بس اک شانتی سی ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔ اقرار سا ہوتا ہے اور سکون بھی۔

(قیصرہ حیات کے ناول ’’ذات کا سفر‘‘ سے اقتباس)